URDUSKY || NETWORK

وزیر اعظم عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد جمع کرا دی گئی

پاکستان میں حزب اختلاف کی سیاسی جماعتوں نے وزیر اعظم عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد قومی اسمبلی میں جمع کرواتے ہوئے یہ دعویٰ کیا ہے کہ عمران خان کے ’دن گنے جا چکے ہیں‘ اور ’ان کے اپنے لوگ ان سے بیزار ہیں۔‘

59

اپوزیشن جماعتوں کے نمائندوں نے منگل کے روز وزیر اعظم کے خلاف تحریک عدم اعتماد قومی اسمبلی سیکریٹریٹ میں جمع کروانے کے ساتھ ساتھ اسمبلی کا اجلاس بلانے کے لیے ریکوزیشن بھی جمع کروائی ہے۔ تحریک عدم اعتماد جمع کرانے کا فیصلہ حزب اختلاف کی جماعتوں کے سربراہی اجلاس میں کیا گیا۔

اس سلسلے میں اپوزیش لیڈر شہباز شریف، آصف علی زرداری اور جے یو آئی ف کے سربراہ اور پی ڈی ایم کے صدر مولانا فضل الرحمان نے اسلام آباد میں ایک مشترکہ پریس کانفرنس کی ہے جس میں انھوں نے یہ یقین دہانی کرائی ہے کہ تحریک عدم اعتماد میں قومی اسمبلی کے 172 سے زیادہ اراکین کی حمایت حاصل ہے۔

تحریک عدم اعتماد کے ردعمل میں وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی روابط شہباز گل نے کہا ہے کہ ‘ہم اپوزیشن کو عدم اعتماد پیش کرنے پر ویلکم کرتے ہیں اور ان کا مقابلہ کریں گے۔’ وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ ‘سب بونے مل کر زور لگا لیں شکست ایک بار پھر سیاسی بونوں کا مستقبل ہے۔’

ذرائع نے بتایا ہے کہ تحریکِ عدم اعتماد پر ن لیگ، پیپلز پارٹی، اے این پی سمیت 86 اراکین کے دستخط ہیں۔ تحریکِ عدم اعتماد قومی اسمبلی سیکریٹریٹ کے اسٹاف نے وصول کی۔

قومی اسمبلی اجلاس کی ریکوزیشن اور تحریک عدم اعتماد جمع کرانے شاہدہ اختر علی، مریم اورنگزیب، خواجہ سعد رفیق، شازیہ مری، نوید قمر، رانا ثنااللہ اور ایاز صادق قومی اسمبلی سیکرٹریٹ پہنچے تھے۔

تحریک عدم اعتماد قومی اسمبلی سیکریٹریٹ کے اسٹاف نے وصول کی۔

قواعد کے مطابق اسپیکر تحریکِ عدم اعتماد پر کم از کم 3 دن کے بعد اور 7 دن سے پہلے قومی اسمبلی کا اجلاس بلانے کے پابند ہیں۔

دوسری جانب اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر پارلیمنٹ ہاؤس سے روانہ ہو گئے۔

اس موقع پر انہوں نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ صورتِ حال کو باغور دیکھ رہے ہیں۔

تحریک کی کامیابی کیلئے نمبرز پورے ہونے کا دعویٰ

دوسری جانب اپوزیشن کی جانب سے دعویٰ سامنے آیا ہے کہ اس نے قومی اسمبلی میں وزیرِ اعظم کے خلاف تحریکِ عدم اعتماد کامیاب بنانے کے لیے نمبرز پورے کر لیے ہیں۔

ذرائع کے مطابق اپوزیشن کی جانب سے 197 سے 202 ارکانِ قومی اسمبلی ساتھ ہونے کا دعویٰ کیا گیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ تحریک عدم اعتماد پیش کرنے کا فیصلہ مسلم لیگ ن کے پارلیمانی پارٹی اجلاس میں کیا گیا تھا۔

اس حوالے سے صدر ن لیگ شہباز شریف کا کہنا تھا کہ تحریک عدم اعتماد موو کر رہے ہیں، حکومت کو تاریخی شکست ہو گی۔

لیگی ارکان کو اسلام آباد سے باہر جانے سے روک دیا گیا

اس سے قبل ذرائع نے بتایا تھا کہ مسلم لیگ ن کے تمام ارکان قومی اسمبلی کو اسلام آباد سے باہر جانے سے منع کردیا گیا ہے، ارکان کو بتایا گیا ہے کہ وزیرِ اعظم عمران خان کے خلاف تحریکِ عدم اعتماد جلد پیش ہونی ہے۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ ن کے اجلاس میں ہدایت دی گئی کہ تمام ممبران اجلاس میں شرکت لازمی بنائیں۔

مسلم لیگ ن کی پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں تمام ارکان کو ابتدائی طور پر اگلے 20 دن تک اسلام آباد میں قیام کی ہدایت دی گئی اور ارکان کو بتایا گیا کہ اگلے 3 ہفتے انتہائی اہم ہیں۔

اس سے پہلے اپوزیشن نے تحریک عدم اعتماد کے حوالے سے سیاسی اور قانونی مشاورت مکمل کر لی تھی۔

قانونی مشاورت کے بعد طے ہوا ہے کہ وزیرِ اعظم اور اسپیکر کے خلاف بیک وقت تحریک لائی جائے گی۔

بشکریہ: بی بی سی، جنگ، سوشل میڈیا