کھیل و صحت

کرکٹ ورلڈ کپ 2011۔ گڈ لک پاکستان

عدنان شاہد
جیسا  کہ آپ سب جانتے ہیں کہ ورلڈ کپ 2011 کا موسم شروع ہوچکا ہے اور آج سے کچھ دن بعد یعنی 19 فروری 2011کو دنیائے کرکٹ کا سب سے بڑا ایونٹ شروع ہوجائے گا اور زیادہ تر ٹیمیں ورلڈ کپ میزبان ملکوں میں پہنچ چکی ہیں اور وارم اپ میچز کھیلے جارہے ہیں۔ پاکستانی کرکٹ ٹیم بھی بنگلہ دیش پہنچ چکی ہے اور ورلڈ کپ کی تیاریاں شروع کرچکی ہے۔مختلف ٹیموں کے کوچز اور کپتانوں کی طرف سے طرح طرح کے بیانات سننے کو اور پڑھنے کومل رہے ہیں کہ ہم یہ کردیں گے ہم وہ کردیں گے۔ میں غیب کا علم تو نہیں جانتا کہ دعوی کرسکوں کہ کون سی ٹیم ورلڈ کپ جیتے گی اور کون سی نہیں۔ اور یہ بات بھی سب پہ عیاں ہے کہ جو ٹیم کھیل کے تمام شعبوں میں سو فیصد کارکردگی دیکھائے گی وہی ٹیم ٹائٹل جیتے گی اور وہ چاہے کوئی بھی ٹیم ہو۔

Cricket world cup 2011 trophy
Cricket world cup 2011 trophy

بحثیت پاکستانی میری تمام نیک خواہشات، تمنائیں اور دعائیں اپنی پاکستانی کرکٹ ٹیم کے ساتھ ہیں اور میری دلی خواہش بھی یہ ہے کہ پاکستان اب کی بار ورلڈ کپ جیت جائے (آمین)۔ لیکن اگر تمام حقائق کا جائزہ لیا جائے اور پاکستان کی گزشتہ فتوحات کا ریکارڈ دیکھا جائے تو یہ بات سمجھ میں آتی ہے کہ پاکستان نے جب بھی فتح حاصل کی اس فتح میں?پاکستان کی بائولنگ نے کلیدی کردار ادا کیا۔اور اس وقت پاکستانی بائولنگ کی جو پوزیشن ہے وہ بھی سب کے سامنے ہے۔ پاکستانی ٹیم کے دوفاسٹ بائولر محمد آصف اور محمد عامر اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل میں ملوث ہونے کی پاداش میں میں بالترتیب 7 اور 5 سال کی پابندی لگوا کر کرکٹ سے باہر بیٹھے ہوئے ہیں۔ میرے خیال سے محمد عامر کے ٹیم میں موجود ہونے سے پاکستان کا بائولنگ اٹیک کافی مضبوط تھا۔سہیل تنویر کو بھی ان فٹ قرار دے کر ورلڈ کپ سکواڈ سے باہر کیا جاچکا ہے۔ شعیب اختر کی میں اب وہ پہلے والا دم خم نہیں رہا۔ اور پیچھے باقی بائولرز میں عمر گل اور وہاب ریاض رہ جاتے ہیں اور پاکستانی ٹیم کی بائولنگ کا سارا دارومدار ابھی انہی دونوں کے کندھوں پر ہے۔

رہ گئی بات پاکستانی بیٹنگ لائن اپ کی تو آن پیپر دیکھا جائے تو اس وقت پاکستان کے پاس سب سے اچھی بیٹنگ لائن اپ ہے۔ لیکن میں نے اسی بیٹنگ لائن اپ کو میدان میں تاش کے پتوں کی طرح سے بکھرتے ہوئے دیکھا ہے۔ یا سیدھی طرح یوں کہہ لیں کہ ان کا کوئی اعتبار نہیں ہے کہ کب کیا کردیں۔

لیکن میں ٹھہرا ایک سیدھا سادا پاکستانی اور میرا دل چاہتا ہے کہ میرے ملک کی ٹیم اس بار ورلڈ کپ جیت کر لائے۔ تو میری تمام کھلاڑیوں سے التماس ہے کہ وہ تمام آپسی رنجشوں کو بھول بھال کر متحد ہوکر اور جی جان سے کھیلیں تو فتح و کامرانی ان کے قدم چومے گی۔ اور میں اللہ عزوجل سے دعا کرتاہوں کہ وہ ہمارے کھلاڑیوں کے آپس میں پیار و محبت میں اضافہ فرمائے اور انہیں ملک کیلئے کھیلنے اور جیتنے کا حوصلہ عطا فرمائے۔

آخر میں میں یہ کہوں گا کہ وش یو گڈ لک آفریدی، وش یو گڈ لک پاکستان

Related Articles

One Comment

Leave a Reply

Back to top button