ذہنی وجسمانی فٹنس کے تھائی مراکز سیاحوں کی توجہ کا مرکز

ذہنی وجسمانی فٹنس کے تھائی مراکز سیاحوں کی توجہ کا مرکز  

عام طور پر تھائی لینڈ کی سیاحت کا مطلب ہے ساحل سمندر پر ٹھنڈے مشروبات اور مرچ لگے تھائی نوڈلز سے لطف اندوز ہونا، تاہم اب ملک میں ایسے سیاحوں کی آمد میں اضافہ ہو رہا ہے جن کا مقصد جسم کو زہریلے مادّوں سے پاک کرنا ہے

 

خلیج تھائی لینڈ میں واقع جزیرےکوہ فانگان پر ذہنی و جسمانی فٹنس فراہم کرنے کی غرض سے کھولے گئے مراکز پر  ایک بڑی تعداد میں سیاح کھانے، کافی اور الکحل سے دور رہنے کے لیےکئی سو ڈالر خرچ کرتے ہیں۔

یہ اکا دکا نہیں بلکہ اس جزیرے پر قائم کئی ایسے مراکز کی بات ہے، جہاں سیاحوں کی بڑی تعداد اچھی صحت کے حصول کے لیے آتی ہے۔ ان میں سے کچھ اپنے جسم کو زہریلے مادوں سے پاک کرنا چاہتے ہیں،  کچھ کا مقصد وزن کم کرنا ہوتا ہے جبکہ کچھ لوگ دائمی قبض اور نکوٹین کے نشے سے چٹکارا پانے کی جستجو میں ان مراکز کا رخ کرتے ہیں ۔

تھائی لینڈ کے ساحل سیاحوں کی توجہ کا خاص مرکز ہیں

اس دوران ان کوکھانے پینے کے معاملے میں نہایت سخت اصولوں پر عمل کرنا پرتا ہے۔ اس دوران ان کو اسپغول کی بھوسی کے ساتھ bentonite نام کی ایک خاص چکنی مٹی ملا مشروب پینے کو دیا جاتا ہے۔ یہ مشروب ان کی بڑی آنت میں موجود زہریلے مواد کو جذب کرنے کے بعد انہیں جسم سے فلش کر دیتا ہے۔ اس کے علاوہ ان سیاحوں کو پورا دن پانی، گاجر کا جوس اور سبزیوں کی یخنی پینے کو دی جاتی ہے۔

اگرچہ یہ مراکز اپنے صارفین کو اس بات کی یقین دہانی کراتے ہیں کہ ایک طرح سے روزے رکھنے اور آنتوں کی صفائی کے اس پروگرام کو استعمال کرنے  کے بعد وہ اپنے آپ کو زیادہ اچھا محسوس کریں گے، تاہم صحت کے ماہرین اس کے فوائد کے بارے میں کچھ شبہات کا بھی شکار ہیں۔

ہیاں پُر تعیش مراکز میں صحت کے حوالے سے پروگرام متعارف کروائے گئے ہیں ہیاں پُر تعیش مراکز میں صحت کے حوالے سے پروگرام متعارف کروائے گئے ہیں

آسٹریلوی ماہر غذائیات روزمیری سٹینٹن نے خبر رساں ادارے اے ایف پی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اب تک ایسی ایک بھی تحقیق سامنےنہیں آئی ہے جو یہ ثابت کرے کہ یہ طریقہ کار پُر اثر ہے۔ وہ کہتی ہیں کہ اس طریقہ کار کے ذریعے ہوتا یہ ہے کہ اس سے آنتوں میں رہنے والے اہم بیکٹریا جو آنتوں اور جسم دونوں کے لیے ضروری ہوتے ہیں، جسم سے خارج ہو جاتے ہیں۔

دوسری جانب ان مراکز کے چند صارفین نے خبررساں ادارے اے ایف پی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح سے روزے رکھنے اور آنتوں کی صفائی کا طریقہ  کار  اختیار کرنے کے باعث انہیں ہاضمے کی کئی مسائل سے چھٹکارا ملا ہے۔ کئی دیگر کا کہنا تھا کہ اس وجہ سے نہ صرف خوراک کے حوالے سے ان کی بری عادات کا خاتمہ ہوا ہے بلکہ ان کو وزن کم کرنے میں بھی مدد ملی ہے۔

بشکریہ ڈی ڈبلیوڈی

Related Articles

Leave a Reply

Back to top button