Ultimate magazine theme for WordPress.

2009 خدا حافظ!!!

124

کیا کھویا کیا پایا؟

عظیم ہیں وہ افراد جو انسانیت پر زندگی کو آشکار کرکے اپنا احسان مند بنا دیتے ہیں؛ جو خود پسندی کے فریب سے کہیں دور صدیوں کو سمیٹ کر عظمت کی بلندیوں پر پہنچ چکے ہوتے ہیں جبکہ دوسرے اسکی گرد بھی نہیں پا سکتے اور مدتوں بعد جب انکا قید کیا ہوا وقت آشکار ہونا شروع ہوتا ہے تو انکے قدموں کے نشان بھی مٹ رہے ہوتے ہیں ۔

تحریروتحقیق: محمد الطاف گوہر
صدیاں اپنے ساتھ وہ سب کچھ سمیٹ کر لے جاتی ہیں جنکا اکثر تصور بھی کرنا محال ہوتا ہے ؛ وقت بہت ظالم ہے جوکسی کا بھی انتظار نہیں کرتا ؛جبکہ انسان زندگی کے ماہ و سال اسکے ساتھ کندھے سے کندھا ملائے گزارتا ہے اور اگر ذرا سی بھی چوک ہو جائے تو یہ انسان کو پچھاڑ دیتا ہے اور ا پنی چال چلتا ہو ا قدموں کے نشان چھوڑتا چلا جاتا ہے ۔افراد جب شعوری بالیدگی کے عمل سے گزر کر حالات سے پنجہ آزمائی پر اتر آئے تو پہلی بار انہیں وقت کی لاثانی قوت کا اندازہ ہوا۔احمق ہے وہ فرد جو وقت کی لامحدود طاقت کو نہیں سمجھتا اور اسکے ضیاع کا تدارک نہیں کرتا ؛ جو لمحہ گزر گیا اسکی واپسی نہیں مگر ان لمحات میں وقت کو اسی طرح محفوظ کیا جا سکتا ہے کہ اپنی ذہنی اور جسمانی قوتوں کا مصرف کسی مقصد کی نہج پر ڈالا جائے۔ زندگی کے اعلی مقاصد اور انکی تکمیل میں محویت ایسے محرکات ہیں جو نہ صرف صدیوں کے سفر ایام میں تبدیل کر دیتے ہیں بلکہ بعض اوقات وقت کو بھی پچھاڑ دیتے ہیں ۔
عظیم ہیں وہ افراد جو انسانیت پر زندگی کو آشکار کرکے اپنا احسان مند بنا دیتے ہیں؛ جو خود پسندی کے فریب سے کہیں دور صدیوں کو سمیٹ کر عظمت کی بلندیوں پر پہنچ چکے ہوتے ہیں جبکہ دوسرے اسکی گرد بھی نہیں پا سکتے اور مدتوں بعد جب انکا قید کیا ہوا وقت آشکار ہونا شروع ہوتا ہے تو انکے قدموں کے نشان بھی مٹ رہے ہوتے ہیں ۔
خیرو شر کے جنگ و جدل ؛ فنا اور بقا کی آنچ ؛کبھی علم و دانش کے ڈھیر اور کبھی آلات جدید کا انبار یہ سب انسانی ذہن کا کمال ہے کہ تسخیر انفس و آفاق پر گامزن ہے۔دنیا کو کبھی جسمانی قوت نے زیر کیا اور کبھی دولت کی ؛ اور کبھی انڈسٹری کی اور کبھی معلومات کی مگر آج علم دنیا کا مقدر بن گیا ہے۔ یہ بات تو واضع ہو چکی کہ اب انڈسٹری اور صنعت کسی نئی راہ پر گامزن نہیں کہ جسکا ایندھن زر تھا بلکہ آج کا دور معلومات کی بہتی رو کا ایک سیلاب ہے جسے آپ اطلاعاتی معاشرہ کہ سکتے ہیں جبکہ اسکا ایندھن علم ہے۔ آج کا دور تہذیبوں کے ادغام کا دور ہے معلومات کا ایک سیلاب امڈ آیا ہے جبکہ اس عہد کی طاقت صرف علم کے مرہون منت ہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ ہماری زندگیوں کو کنٹرول کرنے والی طاقت نے کئی روپ بدلے ، ابتدائی زمانے میں طاقت صرف جسمانی قو ت کا نام تھا ،اور زیادہ طاقت ور اور تیز رفتار شخص نہ صرف اپنی زندگی بلکہ اردگرد موجود دوسرے لوگوں کی زندگیوں پہ بھی اثر انداز ہونے کی صلاحیت رکھتا تھا۔ اسی طرح تہذیبی ارتقا کے ساتھ ساتھ طاقت وراثت کے نتیجے میں حاصل ہونے لگی۔ اپنے جا ہ و جلال کے باعث بادشاہ واضح اختیارات کے ساتھ حکمرانی کرنے لگا جبکہ شاہی قرابت دار اپنی قربت کے باعث طاقت حاصل کر سکتے تھے۔ پھر اچانک زمانے نے جست بھری ، عہد نے پلٹا کھایا اور صنعتی دور کی ابتداء ہوئی اور سرمایہ طاقت بن گیا جبکہ سرمایہ جن کی پہنچ میں تھا وہ صنعتی عمل کے باعث دوسروں پر قابض ہونے لگے مگر کب تک؟
البتہ آج بھی ان عوامل سے چشم پوشی نہیں کی جا سکتی کہ سرمائے کا ہونا نہ ہونے سے بہتر ہے ، جسمانی توانائی کا ہونا بہرحال یقیناً بہتر ہے ، تا ہم ، آج طاقت کا عظیم سرچشمہ صرف اور صرف علم ہے۔ ارتقاء کا دھارا اب کسی اور طرف گامزن ہے۔اس اطلاعاتی معاشرے کی ترجیحات اب کسی بھی طرح سے دقیانوسی نہیں رہیں۔آج اگر طاقت کا بہاو ملاحظہ کرنا ہو تو ذرہ آنکھوں سے تفریحات کی پٹی اتار کر دیکھئے کہ گرگٹ کی طرح رنگ بدلنے والی دنیا میں اب طاقت کا توازن کیا ہے اور اسکا تعین کیسے کریں؟ ان حقائق سے کنارہ کشی کسی بھی طرح سے مزید دیر کی متحمل نہیں ہو سکتی۔ جہاں اقوام عالم کے نوجوان دنیا کی طاقت کے مرا کز ہیں وہاں ہم اپنی قوم کے نوجوان کو کیا دے رہے ہیں؛ اور ہمارے نوجوان کہاں کھڑے ہیں ؟
قابل ذکر بات یہ ہے کہ آج طاقت کی کنجی تک رسائی ہم سب کے بس میں ہے۔ اگر آپ وسطی زمانہ میں بادشاہ نہ ہوتے تو آپکو بادشاہ بننے کیلئے بے پناہ تگ و دو کرنا پڑتی ، صنعتی انقلاب کے آغاز میں ، اگر آپ کے پاس زبردست سرمایہ نہ ہوتا تو آپ کے راستے کی رکاوٹیں آپ کی کامیابی کا راستہ مسد ور کر دیتیں۔ لیکن چند نوجوان آج ایک ایسی کارپوریشن کو جنم دے سکتے ہیں جو پوری دینا کو ہی بدل ڈالے۔ جدید دنیا میں اطلاعات، انفارمیشن بادشاہوں کی چیز ہے۔ مختلف علوم تک رسائی کے باعث آج کا نوجوان نہ صرف اپنا آپ بلکہ پوری دنیا تک بدل کر رکھ سکتا ہے مگر یہ سب کچھ اسکی تربیت پہ منحصر ہے۔ زر صنعتی سماج کا ایندھن تھا مگر اب اطلاتی معاشرے میں یہ ایندھن یا طاقت صرف اور صرف علم ہے ؛اکیسویں صدی میں انفارمیشن کا طوفان امڈ آیا ہے ؛ اسکا ناقابل تصور بہاو دنیا کو علم کے گہوارے کیطرف دھکیل رہا ہے۔

عمل سے زندگی بنتی ہے جنت بھی جہنم بھی
یہ خاکی اپنی فطرت میں نہ نوری ہے نہ ناری ہے

علم سے بڑھ کر کوئی چیز ہے تو وہ عمل ہے ؛ کیونکہ کائنات کا ذرہ ذرہ ایک حرکت و ارتعاش کے رو پر چل رہا ہے ؛ کائنات کی ہر شے کی زندگی سے آشنائی فقط متحرک رہنے میں ورنہ موت؛ دیدہ دل وا کیجیے اور جس طرف بھی نظر دوڑائیں زمین پر یا آفاق میں قدرت کی ہر شے ایک دعوت عمل دیتی نظر آئے گی ؛ عمل سے ہی نتائج پیدا ہوتے ہیں ۔ موثر عمل کی اہمیت پہچاننے والے فرد کے ہاتھ میں آنے سے پہلے ؛ علم محض ایک امکانی قوت رہتا ہے ؛ جبکہ قوت کی اصل تعریف عمل کرنے کی صلاحیت ہے۔

پاکستان نے 2000-2010 میں کیا کھویا کیا پایا؟

پاکستان گزشتہ دہائی میں بہت سے نشیب و فراز سے گزرا ؛ کبھی حالات نے جھنجھوڑا اور کبھی واقعات نے مگر آفرین ہے عوام پر کہ ہر حال میں سینہ سپر رہی؛ پر آشوب ناگہانی نے خوف و ڈر جیسے الفاظ کے معنی بدل کے رکھ دیئے اور قوم کے غیور پختہ عزم اپنے فرائض کو سر انجام دیتے رہے؛ جہاں پاکستان کو وجود اغیار کی نظروں میں کھٹکتا ہے وہاں قوم کے جوان بچے اسے ترقی وکامرانی کی کیطرف لیجانے کا عہد کئے ہوئے ہیں۔


Dec. 17 Officials barred from leaving Pakistan
Dec. 9 Pakistan arrests 5 men missing in U.S.
Five people arrested in Pakistan had been reported missing in the United States, and police are confident they were planning terrorist acts

* World in Dec. 9

Elsewhere: Baghdad, Dec.8: Car bombs killed at least 127 people
Dec. 5 Taliban claims mosque strike. Rawalpindi
Nov.12 Blast ‘hits security HQ’. Peshawar

Elsewhere: West Bank, Nov.5: Abbas will not seek re-election
Nov.1 35 dead in explosion Rawalpindi: An explosion ripped through commercial Cannt area , killing at least 25 people, as they lined up to collect their monthly salary
Oct.28 Car bomb kills at least 100 in market Peshawar: A car packed with 150 kilograms of explosives detonated at Meena Bazaar, killing at least 90 people and injuring more than 200 others

Elsewhere: Kabul, Oct.27: 3 U.N. staff killed in firefight
Oct.24 Pakistan takes key Taliban town of Kotkai. Tribal Areas
Oct.17 Major Pakistani ground offensive begins. Tribal Areas

Elsewhere: Maldives, Oct.16: Cabinet meets underwater
Oct.14 38 killed as police offices attacked. Lahore
Oct.12 41 dead in Swat Valley blast. NW Pakistan
Oct.10 Armed militants hold hostages at army HQ. Rawalpindi

Elsewhere: Japan, Sep.15: Hatoyama takes over as PM
Aug.7 Pakistani Taliban leader ‘killed’ Tribal Areas: There are growing indications that Pakistan’s most wanted man, Taliban leader Baitullah Mehsud, has been killed by a US missile

Elsewhere: Western China, Jul.5: Scores killed in China protests
May.30 Pakistan secures key Swat Valley city [Map of Mingora West Pakistan] NW Pakistan: The Pakistani security forces have taken back the city of Mingora from the Taliban, calling it a significant victory in its offensive

Elsewhere: North Korea, May.26: N. Korea fires short-range missiles

Elsewhere: North Korea, May.25: N. Korea conducted second nuclear test
May.15 Thousands flee fighting. West Pakistan

Elsewhere: Hong Kong, May.1: Flu hotel sealed off
Apr.22 Taliban claims victory near Islamabad. NW Pakistan

Elsewhere: Turkey, Mar.27: Bodies found at helicopter crash site

خدا حافظ!!!
3 تبصرے
  1. اسماء پيرس کہتے ہیں

    آپ کو اور آپکے اہل خانہ کو نيا سال مبارک

  2. altafgohar کہتے ہیں

    آپ کو بھی نیا سال مبارک

  3. طارق راحیل کہتے ہیں

    نیا سال سب کو مبارک
    کاش پچھلے سال کی غلطیاں اب نہ دھرائی جائیں
    اللہ اس سال ہم سے راضی رہے
    ہمارے گناۃ کم اور نیک کرنے کے کی توفیق ذیادہ عطا فرمائے
    آمین
    http://tariqraheel.wordpress.pk/

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.