اردو ادب و ثقافت

کراچی کے حالات پر

خوں میں لتھڑی ہوئی پوشاکِ سحر ملتی ہے
بند ب وری  میں کٹی  لاشِ بشر  ملتی    ہے
خوف  کے  سائے  نظر  آتے ہیں  ہر  چہرے پر
سہمی  سہمی  ہوئی  ہر  راہگزر  ملتی  ہے
محوِ رقص  اژدہے  سفّاکی و دہشت کے ملیں
فاختہ   گریہ   کناں   شہر   بدر   ملتی    ہے
گوہرِ    شبنمِ   تازہ   تو   ہُوا    ہے   عنقا ۔۔۔۔۔۔۔
سُرخی ء خوں سے بھری شاخِ شجر ملتی ہے
اپنے    کشکول    سمندر   میں   بہا دو لوگو
امن  کی  بھیک  کراچی  میں کدھر ملتی ہے
وَرۡد  جھک  جاتا  ہے  سر شرم کے  مارے اپنا
جب بھی قائد سے تصور میں نظر ملتی  ہے

وَرۡد بزمی نشکریہ، کریئٹو رائیٹرز فورم انٹرنیشنل  

Related Articles

Leave a Reply

Check Also
Close
Back to top button