سیاست

وزیر اعلیٰ پنجاب شکایت سیل کے ساتھ ایک دن

تحریر : محمد الطاف گوہر

انسانیت کا دشمن صرف وہی نہیں جو کسی دوسرے کا حق مارتا ہے بلکہ ہر وہ فرد بھی اس زمرے میں آتا ہے جو اپنے مفاد کو دوسروں پر ترجیح دے ۔ اگر ایک طرف مافیا نے لوگوں کا سکون غارت کیا ہوا ہے تو دوسری طرف انصاف کی خاطر در در کی ٹھوکریں بھی کھانی پڑتی ہیں ۔ سائل کسی بھی قیمت پر اپنے مسائل کا حل چاہتا ہے مگر بعض اوقات معاملات زندگی میں کچھ ایسے بھی مقام آتے ہیں کہ حالات کے گرداب کے سامنے انسان بے بس نظر آتا ہے ۔ البتہ اگر ارباب اختیار انصاف کا بول بالا رکھیں تو سائل کیلئے امید کی ایک کرن ضرور روشن ہو جاتی ہے ۔مسائل میں گھرے ہو ئے لوگوں کی داد رسی کرنا ارباب اختیار کا نہ صرف اولیں فرض ہے بلکہ ایک کار خیر بھی ہے ۔ طرح طرح کے حالات کے مارے پریشان حال لوگ تھانوں ، کچہریوں اور عدالتوں اور دیگر سرکاری اداروں کے چکر کاٹتے نظر آتے ہیں ، بعض تو اپنوں کے ہی ستائے ہوئے ہوتے ہیں اور بعض مافیا کے ڈ سے ہوئے ، اگر انکو انصاف کی خاطر روشنی کی ہلکی سی بھی کرن نظر آئے تو انکی امید باندھ جاتی ہے ۔ ورنہ اسی ڈگر پر چلتے سالوں پہ محیط سلسلہ ختم ہونے کا نام نہیں لیتا۔
البتہ ایسی بات نہیں کہ ان پریشانیوں میں گھرے لوگوں کو اپنے مسائل کا حل معلوم نہ ہو بلکہ انکو وسائل کے کمی ساتھ ساتھ ارباب اختیار تک کی رسائی میں دشواری کا سامنا رہتا ہے ۔ ہر حاجت مند کی خواہش ہوتی ہے کہ اسکے معاملہ کوئی ذمہ دار اور دیانت دار فرد نبٹا ئے ، اور اکثر اوقات خواہش ہوتی ہے کہ انکی شنوائی اعلیٰ عہدہ داران تک ہو۔ ا س طرح کے واقعات کم و بیش نظر آئے ہیں ارباب اختیار نے ضرورت مند اور مظلوم کی داد رسی کا مناسب اہتمام کیا ہو ، کیونکہ ان سارے معاملات کو نبٹا نے کیلئے ادارے موجود ہیں مگر پھر بھی کچھ معاملات ماوارء ہوتے ہیں، یا پھر کھٹائی میں پڑ جاتے ہیں جنکا حل ضروری ہے ۔ اور ایسے عوامل کا تدارک بھی اسی صورت ممکن ہے کہ ارباب اختیار نے اپنے دروازے عوام کیلئے کھلے رکھے ہوں، جہاں بے سروسامانی کا شکار سائل اپنے معاملات کا حل پا سکے ،جبکہ یہیں مثالی پن کی ایک جھلک نظر آتی ہے ۔

آج وزیراعلیٰ پنجاب کے قائم کردہ شکایت سیل میں بیٹھے ، پورے پنجاب کے مختلف علاقوں کے سے آئے ہوئے حاجت مند وں کا ایک جم غفیر دیکھا۔ ہر آنے والے کی داد رسی کا فوری اہتمام ہوتا نظر آیا۔وزیر اعلیٰ پنجاب، جناب میاں شہباز شریف صاحب نے3 -کلب روڈپر جو عوام کی شکایات کیلئے شکایت سیل قائم کیا ہے اس میں مسائل کے فوری حل کیلئے تقریبا پنجاب کے ہر شہر سے آئے ہوئے لوگوں کا ایک مجمع سا لگا ہوا تھا ۔ کچھ لوگ کرسیوں پر براجمان تھے اور کچھ اپنی باری کے انتظار میں کھڑے ہاتھ میں درخواست پکٹرے آہستہ آہستہ ڈائریکٹر پبلک افیر، جناب شاہد قادر صاحب کے میز کیطرف بڑھ رہے تھے ، لوڈ شیڈنگ کے باعث کبھی کبھی گرمی کا ماحول بھی ہو جاتا اور اسکے ساتھ ساتھ روزہ داری بھی مگر مجھے شاہد قادر صاحب کے ماتھے پر کوئی ناگواری یا شکن کے آثار نظر نہ آئی جبکہ شکایات کا ایک انبارموجود تھا ۔ ہر فرد کی خواہش تھی کہ اپنی شکایت کی درخواست لیکر شاہد قاد ر صاحب کی میز کی طرف جائے اور اپنا مسلہ خود بیان کرے۔ جبکہ شاہد قادر صاحب اپنی ذمہ داری بڑی تندہی سے سرانجام دے رہے تھے،اور یہ واضع لگ رہا تھا کہ وہ ایک اعلیٰ عہدہ دارہونے کے ساتھ ساتھ معاملہ فہم بھی ہیں جو ساتھ ساتھ معاملات کو بخوبی نپٹارہے تھے ۔ چندے کچھ تفتیش کے ساتھ فورا معاملہ نوعیت بھانپ لیتے اور کچھ ضروری سوالات کرنے کے بعد فوری حل کیلئے درخواست متعلقہ لوگوں کیطرف بھجوا دیتے، جبکہ ہر نئے والے درخواست گزار سے تفصیلات پہلے سے ہی لی جارہی تھیں تا کہ معاملات جلدی نبٹائے جا سکیں ۔

میرے اک سوال پر بتلانے لگے کہ ہم ہر شکایت لیکر آنے والے کیلئے ایک جیسا معاملہ رکھتے ہیں اور کو شش کرتے ہیں کہ پریشان حال سائل جو کہ دور دور سے آئے ہوئے ہیں ا نکو بار بار چکر نہ لگانے پڑیں ۔ لہذا کوشش یہی کی جاتی ہے کہ معاملات فوری سلجھانے کا اہتمام ہو۔ انکے ہر آنے والے کو خندہ پیشانی سے ملنے پر مجھے حیرانی ہوئی کیونکہ اکثر لوگ اپنی بات منوانے کیلئے بضد بھی ہوجاتے مگر انکے رویے میں ترشی دیکھنے میں نہ آئی۔ ایکصاحب فرمارہے تھے کہ میںس جناب شہباز شریف صاحب سے ملنا چاہتا ہوں ، ایس پی تک تو میں مل چکا ہوںمگر کوئی شنوائی نہیں ،اگر آئی جی صاحب تک میرا مسلہ پہنچ جائے تو پھر بات بنتی نظر آتی ہے، ابھی وہ صاحب بات کر ہی رہے تھے کہ اسی اثنا میں انکی درخواست کے بارے میں ،متعلقہ بات، آئی جی صاحب ہو رہی تھی ، اس سائل نے جناب شہباز شریف صاحب سے ملنے کا اصرار تر ک کردیا حالانکہ انکو کہا گیا کہ اگر وہ پھر بھی ملنا چاہیں تو کوئی پابندی نہیں ۔ یعنی ایک طرف فون بج رہے تھے تو دوسری طرف سائل کی خواہش کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے معاملات بھی نبٹائے جا رہا تھے۔ ایک صاحب جو کسی بیماری کی وجہ چلنے سے معذور تھے انکو دو لوگ اپنے کندھوں کے سہارے لیکر آئے ہوئے تھے انکا معاملہ یہ تھا کہ انکا گھر کو ئی ہتھیانا چاہتا ہے لہذا اسکے لئے بھی فوری حکم نامہ جاری کیا گیا، اور اسی طرح ایک صاحب جو کہ غالبا جھنگ سے آئے ہوئے تھے انکو بھی شدید پریشانیوں کا سامنا تھا اور اسکا بھی فوری حل نکالا گیا جسکے باعث آنے والوں کے چہروں پر اطمینان کے آثار نظر آرہے تھے۔

میں یہی سوچ رہا تھا کہ لگتا ہے کہ وہی لوگ یہاں آتے ہونگے جو زیادہ تعلیم یافتہ نہیں یا جنکو تھانے، کچہریوں اور دیگر سرکاری اداروں کی معلومات نہیں ، مگریہ میری ایک خام خیالی تھی کیونکہ اکثر افراد کے معاملات ، کچھ اداروں ، اورتھانوں میں اور اکثر کے احباب میں الجھے ہوئے نظر آئے ۔ ایک خاتون جو کافی تعلیم یافتہ لگ رہی تھیں ، انہوں نے اپنابارے میں بتلاتے ہوئے حیران کر دیا کہ وہ ایک اعلیٰ تعلیم یافتہ ہونے کی علاوہ ایک سرکاری ہسپتال میں اچھے عہدے پر اپنے فرائض سر انجام دے چکی ہیں ، یعنی وہ ایک ڈاکٹر ہے جبکہ اسکے میاں بھی ایک ڈاکٹرہیں جنہوں نے ایک گھریلو نجی جھگڑے کی بنیاد پرخود ہی استعفیٰ لکھ کر فارغ کروا دیا اور اس وقت ان محترمہ کو معلوم ہوا جبکہ انکو ہسپتال سے فار غ کر دیا گیاتھا ، اور جواز یہ کہ انکے شوہر نے انکا استعفیٰ داخل دفتر کروایا ،لہذا وہ محترمہ اسکے باعث پریشانی کا شکار ہیں جبکہ انکو دو پچوں کی کفالت بھی خود کو کرنی پڑتی ہے ۔ انکے معاملہ کو بھی افہام و تفھیم سے فریقین کے مابین حل کرنے کی کاوش نظر آئی۔

مسائل تو بے شمار ہیں اور راستے دیکھانے والے بہت ہیں مگر جب حل کیلئے نکلو تو پتا چلتا ہے کہ یہ کتنا تکلیف دہ امر ہے۔ اگر پریشان حال اور مجبوریوں کے مارے کسی چیز کی تلاش میں ہیں تو وہ یہی ہے کہ عملی طور پر ان لوگوں کی داد رسی کی جائے ۔ کیونکہ تسلی دینا اور وعدے کرنا تو آسان نظر آتا ہے مگر کسی کی تکلیف کو دور کرنا واقعی ایک معنی رکھتا ہے ۔ عوام جب بھی کسی نمائندے کو اپنے لئے منتخب کرتے ہیں تو انکی یہ امید ہوتی ہے انکے یہ نمائندے ایوانوں میں جا کر ملکی سالمیت کی کوششوں کے ساتھ ساتھ نہ صر ف اپنی عوام کی فلاح و بہبودکا اہتمام کریں گے بلکہ اپنے عوام کی ہر پریشانی میں انکے اسی طرح ساتھ ہوں گے ،جیسے الیکشن کے دنوں میں ایک رویہ کا اظہار کر چکے ہیں۔ عوام کو جب سرکاری اداروں کے چکر کاٹنے پڑتے ہیں اور شنوائی نظر نہیں آتی تو انکوایک آسرے کی ضرورت محسوس ہوتی ہے کہ اب وہ اپنے منتخب نمائندوں کی مدد لیں ۔ اس عمل میں اگر داد رسی کا اہتمام ہوتو یہ ایک عوامی خدمت کا شاندار نظارہ پیش کرتا ہے ، اس کاوش کی جھلک مجھے وزیر اعلیٰ پنجاب جناب شہباز شریف کے قائم کردہ شکایات کے سیل میں نظر آئی جہا ں اقربا ء پروری سے بالاتر ہو کر ہر سائل کی پریشانیوں کے حل کیلئے نہ صرف خوش مزاج لوگ موجود ہیں بلکہ دور دراز سے آئے ہوئے پریشان حال لوگوں کے معاملات کو فوری حل کرنے کا اہتمام بھی موجود ہے ۔جبکہ یہ مثالی سلسلہ نہ صرف اپنی کابیابی کے نقش بھی چھوڑ رہا ہے بلکہ حقائق کا منہ بولتا ثبوت ہے ۔

feedback
[email protected]

Related Articles

One Comment

Leave a Reply

Back to top button