تازہ خبریں

ڈرون حملوں کیخلاف بھی مظاہرہ

ق

پاکستان کے قبائلی علاقے میرانشاہ میں جمعہ کو امریکی جاسوس طیاروں کے حملوں کے خلاف سب سے بڑا احتجاجی مظاہرہ کیا گیا جس میں مقامی لوگوں کے مطابق دو سے اڑھائی ہزار افراد نے شرکت کی۔

اس مظاہرے میں امریکہ کے خلاف شدید نعرہ بازی کی گئی اور ڈرون حملے بند کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔

پاکستان میں اگرچہ ڈرونز حملوں کا سلسلہ دو ہزار چار میں شروع ہوا لیکن اس کے خلاف قبائلی علاقوں میں مظاہرے کم ہی دیکھنے کو ملے ہیں۔

اس مظاہرے میں کالج اور سکولوں کے طلباء کے علاوہ تاجروں اور دیگر مقامی لوگوں نے بڑی تعداد میں شرکت کی ہے۔ ایسی اطلاعات ہیں کہ اس ریلی میں دینی مدارس کے طلبا بھی بڑی تعداد میں شریک تھے۔

مظاہرین نے بینرز اور کتبے اٹھا رکھے تھے جن پر لکھا تھا کہ ڈرونز حملے بند کیے جائیں ، ’قاتل، قاتل امریکہ قاتل‘ اور ’رابرٹ گیٹس کو گرفتار کیا جائے‘۔ میرانشاہ میں تمام تعلیمی ادارے اور کاروباری مراکز بند تھے۔

مظاہرے میں شریک افراد نے سی آئی اے کے حکام کی گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے۔مظاہرین کہہ رہے تھے کہ ڈرون حملوں میں بے گناہ افراد کو نشانہ بنایا جاتا ہے ان حملوں سے علاقے میں سخت خوف ہے یہاں تک کہ ان حملوں سے مسجدیں، جنازے اور معصوم بچے بھی محفوظ نہیں ہیں۔

مظاہرین کا کہنا تھا کہ ماضی میں میران شاہ کالج میں ڈیڑھ ہزار تک طالبعلم ہوتے تھے جو ہاسٹلوں میں رہائش پزیر تھے لیکن اب صرف پچاس سے اسی طالبعلم موجود ہیں باقی چلے گئے ہیں۔ اب زیادہ تر لوگ یہاں ذہنی مریض بن گئے ہیں۔

احتجاجی ریلی کالج چوک سے روانہ ہوئی اور مختلف راستوں سے ہوتے ہوئے میرانشاہ بازار پہنچی جس کے بعد دتہ خیل اڈہ میں ریلی کے قائدین نے جلسہ عام سے خطاب کیا ہے۔

ان رہنماؤں نے کہا کہ احتجاجی ریلیاں شمالی وزیرستان کے مختلف علاقوں میں منعقد کی جائیں گی۔ اتوار کے روز تحصیل میر علی میں اسی طرح کا احتجاجی مظاہرہ کیا جائے گا اور اس کے بعد صوبہ خیبر پختونخواہ میں بھی مظاہرے کیے جائیں گے۔

انھوں نے کہا کہ اگر امریکہ نے ڈرون حملے نہ روکے تو قبائل اسلام آباد تک لانگ مارچ کریں گے۔

قبائی علاقوں میں اب تک دو سو بیس ڈرون حملے ہو چکے ہیں جن میں سرکاری اعداد و شمار کے مطابق تیرہ سو سے زیادہ افراد ہلاک ہو ئے ہیں جبکہ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ ہلاکتوں کی تعداد دو ہزار سے زیادہ ہے۔

میرانشاہ میں تین ماہ پہلے بھی ایک مظاہرہ کیا گیا تھا جبکہ گزشتہ ماہ مختلف قبائل سے تعلق رکھنے والے افراد نے اسلام آباد میں احتجاجی دھرنا دیا تھا اور مطالبہ کیا تھا کہ حکومت ڈرون حملے رکوانے کے لیے امریکہ سے بات کرے لیکن اس کے باوجود امریکی جاسوس حملوں کا سلسلہ جاری ہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Back to top button