Ultimate magazine theme for WordPress.

‘ہالی اور بالی’ اب مل کر خواب بُنیں گے

35

دنیا کی دو اہم فلم صنعتوں کی طرف سے مشترکہ فلم سازی بڑھانے اور تجارتی تعاون کو وسعت دینے کے معاہدے کا اعلان کیا گیا ہے۔Hollywood

امریکی ہالی وُڈ اور بھارتی بالی وُڈ دنیا میں سب سے زیادہ فلمیں بنانے والی فلمی صنعتوں میں شمار ہوتے ہیں۔ امریکی موشن پکچرز ایسوسی ایشن کی جانب سے جاری کردہ اعلان کے مطابق امریکی شہر لاس اینجلس، جہاں ہالی وُڈ قائم ہے، اور ہندوستانی فلمسازوں کی نمائندگی کرنے والی تنظیموں فلم اینڈ ٹیلی وژن گِلڈ اور فلم فیڈریشین آف انڈیا نے اس معاہدے پر دستخط کئے۔ دستخطوں کی یہ تقریب پیراماؤنٹ پکچرز کے سٹوڈیوز میں منعقد ہوئی۔
بیان میں کہا گیا ہے: ’’دونوں فلمی صنعتیں ہالی وُڈ اور بالی وُڈ فلموں کی تیاری، تقسیم، ٹیکنالوجی، کاپی رائٹس اور کمرشل تعاون کو فروغ دیں گی۔‘‘

بھارتی فلم مائی نیم از خان لاس اینجیلس میں فلمائی گئی تھی

فریقین نے اس بات پر بھی اتفاق کیا ہے کہ لاس اینجلس میں بھارتی فلموں کی پروڈکش کی حوصلہ افزائی کے لئے ایک مشترکہ فلم کونسل بھی بنائی جائے گی۔  بھارتی وفد میں شریک پروڈیوسر بَوبی بیدی کا اس معاہدے کے حوالے سے کہنا تھا، ’’بھارت ہالی وُڈ کے لئے ہمیشہ ہی کشش کا باعث رہا ہے اور یہ معاہدہ ہمیں اس حوالے سے مزید قریب لے آیا ہے، جس سے ملکی اور بین الاقوامی سطح پر فلم سازی کے لئے ہمیں ایک دوسرے کے خیالات اور تجربات سے استفادہ کرنے کا موقع ملے گا۔‘‘

لاس اینجلس شہر کے میئر انٹونیو ویلارائگوسا نے اس موقع پر امید ظاہر کی کہ جیسے بھارتی فلمیں ’مائی نیم از خان‘ اور ’کائٹس‘ لاس اینجلس میں فلمائی گئی ہیں، اُسی طرح مزید ہندوستانی فلموں کی بھی وہاں عکس بندی کی جائے گی۔

رواں برس کے دوران بھارتی اور امریکی فلم انڈسٹریز کے درمیان تعاون کے سلسلے میں یہ دوسرا اہم قدم ہے۔ رواں برس مارچ میں دونوں فلمی صنعتوں نے فلموں کی غیر قانونی خرید و فروخت کو روکنے کے لئے مل کر کوشش کرنے پر اتفاق کیا تھا۔ گزشتہ چند سالوں کے دوران دونوں ممالک کے سٹوڈیوز اور پروڈکشن کمپنیوں کے درمیان کئی مشترکہ پروڈکشنز دیکھنے میں آ چکی ہیں۔ اسی دوران ہالی وُڈ میں بھارتی سرمایہ کاری میں بھی مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔

بشکریہ ڈی ڈبلیو ڈی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.