Ultimate magazine theme for WordPress.

جنا ب 300ارب کب آ ئیں گے

82

ا گر آج ملک کی طرف دیکھیں تو ہر طرف خوف ،اندھیرا، بے چینی، مایوسی،غربت، حکمرانوں کی امریکہ نواز پالیسیاں،دہشت گردی،بے روزگاری،مہنگائی،انتشار،لوٹ مار ، مال حرام، کرپشن، اقرا ءپروری،”خودی کی مضبوطی“،اور نا نجا نے کیا کیا بیماریاں اس کا مقدر بن چکی ہیں۔جس کے با عث ہمارا ملک ”پتھر کے دور“کی طرف گامزن ہے جس کازیادہ انحصار حکمرانوں کی پالیسیاں ہیں۔کیونکہ اگر حکمران چا ہیں تو اس بد قسمت ملک کی تقدیر بدل سکتی ہے۔اور ملکی عوام کو سکھ کا سانس آسکتا ہو جو حکمران دینے نہیں چا ہتے ۔ مگر وہ اس بات کو ما ننے سے انکاری ہیں کہ ان کی ملک دشمن پالیسیاں ملک کو اس دوراہے پر لے آ ئی ہیں اور اس کے سا تھ ساتھ ان حکمرانوں کی نام نہا د اور ” ملکی مفاد“ پالیسیو ں کی وجہ سے ہمارے ملکی عوام تذلیل ، غربت اور بدامنی کا شکار ہو چکے ہیں کسی بھی طرف سے کو ئی اچھی خبر سننے کو نہیں مل رہی۔ ہر حکمران صرف نعروں سے عوام کو بیوقوف بنا نے کا کام کر رہا ہے۔ اور ان حکومتی وزیروں نے تو اس بارحج میں بھی کرپشن کر کے یہ ثابت کردیا کہ پاکستان کو کرپشن میں پہلی پوزیشن ملنی چاہیئے تودوسری طرف حکمران اپنی عیاشیوں کی خاطر ٹیکسوںکی شرح میں وقتا فوقتا اضافہ کر تے رہتے ہےں یہ وہی حکمران ہیں جو کھاتے اکٹھا ہیں پیتے اکٹھا ہیں مگر باہر ہا ئے عوا ہا ئے عوام کے بے تکے، بھونگے اور نے معنی نعرے لگاتے رہتے ہیں ۔ یہ حکمران تو حکمران کو ئی محکمہ بھی اپنا کام کر نا اپنے لئے تو ہین سمجھتا ہے۔ ہر محکمے میں چور بیٹھے ہیں جو اپنے آپ کو کر یشن کا بادشاہ کہلانے میں فخر محسو س کر تے ہیں اور کرپشن کر نے میں کو ئی سا نی نہیں رکھتے ہر کام کے نرخ مقرر ہیں۔ایک طرف سارے محکمے کرپشن میں نام بنانے کی دو ڑ میں شامل نظر آ تے ہیں تو دوسری طر ف سپریم کو رٹ کی صور ت میں ایک امید کی کر ن نظر آ ئی ہے جس نے ہر محکمے کوصحیح راہ پر گامزن کر نے کا بیڑہ اٹھا یا ہوا ہے ہر محکمے سے پوچھ کر رہی ہے ۔ جس میں سٹیل مل کا کیس، چینی، گیس، گمشدہ لوگوں کی رہائی،ریلوے کیس، اور بہت سے از خود نوٹس لے کے اپنے ملک کو کرپشن کے گھڑے سے بچا یا۔سپریم کو رٹ کی طرف اب ہر نگاہ جاتی ہے جس پر بھی کو ئی ظلم و زیادتی کر تا ہے وہ جنا ب چیف جسٹس کی طرف امید بھری نگاہ سے دیکھتا ہے ۔ہر کو ئی امید بھری نظروں سے اپنا درد سپریم کورٹ کو بیان کر تا ہے کہ شاید سپریم کو رٹ اس کے زخموں پر مرہم رکھ دے۔ اس وجہ سے سپریم کور ٹ بھی عوامی رائے کااحترام کر تے ہو ئے اپناکام مکمل کر رہی ہے جس کی واضع این آر او،قر ضوں کے معاف کروانے والوں سے واپسی،مثال گمشدہ لوگوں کے بارے میں حکومت سے پوچھنا ، چینی پر ازخود نوٹس، ریلوے و سٹیل مل کیس ، اور پٹرول وغیرہ کی قیمتوں کے بارے میں پوچھ گچھ شامل ہیں ۔ اسی تسلسل کو برقرار رکھتے ہو ئے سپریم کو رٹ اور جنا ب چیف جسٹس محمد افتخار چوہدری صاحب نے رینٹل پاورکے بارے میں بھی کرپشن پر از خود نوٹس لیا اور ملکی عوام کے خزانے میں سوا دو ارب روپے واپس لائے اس وجہ سے عوام کا اعتماد ا ن پر اور بڑھ گیا ہے اور عوامی حلقے اس بات پر خراج تحسین پیش کر تے ہو ئے اب اس 300ارب روپے کی کرپشن کے بارے میں بھی یہی کچھ ہو تا ہوا دیکھنا چا ہتے ہیں جو کہ رینٹل پاور کی کمپنیوں کے ساتھ ہوا۔اور یہی کچھ اس کرپٹ ترین حکومت (جسے کرپشن بڑھنے کا اعزاز ٹرانپرنسی انٹرنیشنل نے بھی دیا ہوا ہے اور جس کے جواب میں ہمارے وزراءجھوٹ، جمہوریت پرآنچ آ نے کا کہہ کر جا ن چھڑانا چا ہتے ہیں۔ اپنی کرپشن چھپانا چا ہتے ہیں۔ جمہوریت کے لبادے میں کرپشن کو چھپانا چا ہتے ہیں۔ اپنے ہر گناہ کو جمہوریت کے حسن سے تعبیر کر نا چا ہتے ہیں) سے ہوتا ہوا دیکھنا چا ہتے ہیں جس نے اپنی عوام کو اقتدار میں آ نے کے بعد انسان کی بجا ئے جانور سمجھنا شروع کر دیا تھا ۔ غریب کے منہ سے نوالہ چھین لیا ۔اور یہ بھی بھول گئی کہ”ہمدردیوں کے ووٹوں سے اقتدار میں آ ئی ہے“اس سے جان چھڑانا چاہ رہے ہیں اور اس 300اربروپے کا بھی عوام حساب ہو تا ہو ا دیکھنا چا ہتے ہیں جس سے ہماری ”معزز حکومت کے “حکومتی وزرائ، ان کے مشیروں وغیرہ نے باپ کا مال سمجھ کر اپنے اکاوئنٹس میں بھر ا۔ اور کرپشن کر تے ہو ئے یہ شیطان کو بھی پیچھے چھوڑ گئے انہوں نے تو حج جیسے مقدس فریضے کو بھی کرپشن کی زینت بنا دیا۔
اب سپریم کو رٹ اور جنا ب چیف جسٹس صاحب پر ایک بھری ذمہ داری آن پڑی ہے جو کہ عوامی امیدوں، عوامی امنگوںکی ہے ۔کہ وہ اس ملک کو بچانے والے راستے میں موجود کا نٹے کیسے کیسے صا ف کرتے ہیں کرپشن کر نے والوں کو نشان عبرت کیسے بنا تے ہیں اور جو 300ارب روپے کرپشن ہو ئی ہے اس کو ان شیطا نوں کے پیٹوں سے کیسے نکلوا کر ملکی خرانے میں واپس بھیجتے ہیں۔

1 تبصرہ
  1. munir hussain s/o ghulam nabi s/o allah dad کہتے ہیں

    And cover not Truth With falsehood, nor conceal
    The Truth when ye Know (what it is )———-HOLY QURAN.
    ———————Lub py ati hy dua bun ky tumuna meri
    ———————Zendgi shama ki soorit how khudaya meri.
    JANAB AP NY SUCH KO HUTA KUR BHOOT ACHA KYA.
    THIS IS NOT FREE MEDIA.
    AP KHUDA SY DURIAN. SUCH KO LEKHNY SY NAH DURIAN.
    WHAT I WROTE ??????????????????? GIVE EVIDENCE.
    HOLY QURAN TOP ON THE——————– EVIDENCE.
    1:—–HONOURABLE CHIEF JUSTICE OF PAKISTAN SAHIB,
    ——NY FURMAYA (THEY SAY) ADVOCATE SAHBAN AND (AUR) AWAM
    —–CORRUPTION KI NUSHAN DHAI KURIAN.
    —-( GIVE INFORMATION ABOUT CORRUPTION )
    ———ONLINE NEWS http://WWW.URDUPOINT.COM
    ————DATED 14/09/2010. ———FREE MEDIA. ??????????????????????
    ——————IN THE LAHORE HIGH COURT LAHORE.
    PETITION NOS. 432/W/1993, 117/R/1994, 103/R/1993 ETC.
    ARE EVIDENCE OF COURT CORRUPTION . WITH EVIDENCE.
    —————-BIGGEST EVIDENCE FOR THE HONOURABLE CHIEF JUSTICE OF PAKISTAN SAHIB.
    ——–FROM LAHORE HIGH COURT COURT NOTICE NEWSPAPER
    ——–DALY MASHRIQ LAHORE DATED 15/06/1969.
    —–WRIT PETITION NOS. 939/R/1968, 940/R/1968,941/R/1968,942/R/1968,
    —943/R/1968, 944/R/1968, 945/R/1968, 946//1968, 947/R/1968. WITH EVIDENCE.
    ——-BIGGEST EVIDENCE FOR THE WORLD .
    ——COURT NOTICE NEWSPAPER DALY TOOFAH GUJRANWALA
    ——-DATED 13/02/1968.——-PETITION NOS. / CASE NOS.
    ——-133, 134, 135, 136, 137, 138, 157, 158, 159/OF 1967.
    —SARFRAZ KHAN, GHULAM NABI, HAKIM ALI, ALI AKBAR SS/O ALLAH DAD AND OTHERS.
    ——-AND PETITION NPOS. / CASE NOS. 149, 150, 151, 152, 153, 154, 155, 156, 157/OF 1967.
    ——-GHULAM NABI S/O ALLAH DAD, ALI AKBAR S/O ALLAH DAD AND OTHERS.
    ——-CASE IS PENDING IN LAHORE HIGH COURT LAHORE.—–WITH EVIDENCE.
    —–IN LAHORE HIGH COURT WRITPETITION NOS. 432/W/1993,
    ——–117/R/1994, 103/R/1993 ETC. WE ARE NOT PETITIONERS OR RESPONDENTS.
    ———GIVE INFORMATION TO HONOURABLE CHIEF JUSTICE OF PAKISTAN SAHIB.
    ——-PLEASE NOW TAKE ACTION AGAINST COURT CORRUPTION.
    ——————RECORD I PUT ON HOLY QURAN
    ——————-FREE MEDIA —-REMOVE IT.

  2. munir hussain s/o ghulam nabi s/o allah dad کہتے ہیں

    And cover not Truth With falsehood, nor conceal
    The Truth when ye Know (what it is )———-HOLY QURAN.
    ———————Lub py ati hy dua bun ky tumuna meri
    ———————Zendgi shama ki soorit how khudaya meri.
    JANAB AP NY SUCH KO HUTA KUR BHOOT ACHA KYA.
    THIS IS NOT FREE MEDIA.
    AP KHUDA SY DURIAN. SUCH KO LEKHNY SY NAH DURIAN.
    WHAT I WROTE ??????????????????? GIVE EVIDENCE.
    HOLY QURAN TOP ON THE——————– EVIDENCE.
    1:—–HONOURABLE CHIEF JUSTICE OF PAKISTAN SAHIB,
    ——NY FURMAYA (THEY SAY) ADVOCATE SAHBAN AND (AUR) AWAM
    —–CORRUPTION KI NUSHAN DHAI KURIAN.
    —-( GIVE INFORMATION ABOUT CORRUPTION )
    ———ONLINE NEWS http://WWW.URDUPOINT.COM
    ————DATED 14/09/2010. ———FREE MEDIA. ??????????????????????
    ——————IN THE LAHORE HIGH COURT LAHORE.
    PETITION NOS. 432/W/1993, 117/R/1994, 103/R/1993 ETC.
    ARE EVIDENCE OF COURT CORRUPTION . WITH EVIDENCE.
    —————-BIGGEST EVIDENCE FOR THE HONOURABLE CHIEF JUSTICE OF PAKISTAN SAHIB.
    ——–FROM LAHORE HIGH COURT COURT NOTICE NEWSPAPER
    ——–DALY MASHRIQ LAHORE DATED 15/06/1969.
    —–WRIT PETITION NOS. 939/R/1968, 940/R/1968,941/R/1968,942/R/1968,
    —943/R/1968, 944/R/1968, 945/R/1968, 946//1968, 947/R/1968. WITH EVIDENCE.
    ——-BIGGEST EVIDENCE FOR THE WORLD .
    ——COURT NOTICE NEWSPAPER DALY TOOFAH GUJRANWALA
    ——-DATED 13/02/1968.——-PETITION NOS. / CASE NOS.
    ——-133, 134, 135, 136, 137, 138, 157, 158, 159/OF 1967.
    —SARFRAZ KHAN, GHULAM NABI, HAKIM ALI, ALI AKBAR SS/O ALLAH DAD AND OTHERS.
    ——-AND PETITION NPOS. / CASE NOS. 149, 150, 151, 152, 153, 154, 155, 156, 157/OF 1967.
    ——-GHULAM NABI S/O ALLAH DAD, ALI AKBAR S/O ALLAH DAD AND OTHERS.
    ——-CASE IS PENDING IN LAHORE HIGH COURT LAHORE.—–WITH EVIDENCE.
    —–IN LAHORE HIGH COURT WRITPETITION NOS. 432/W/1993,
    ——–117/R/1994, 103/R/1993 ETC. WE ARE NOT PETITIONERS OR RESPONDENTS.
    ———GIVE INFORMATION TO HONOURABLE CHIEF JUSTICE OF PAKISTAN SAHIB.
    ——-PLEASE NOW TAKE ACTION AGAINST COURT CORRUPTION.
    ——————RECORD I PUT ON HOLY QURAN
    ——————-FREE MEDIA —-REMOVE IT.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.